https://www.performancetrustednetwork.com/vium7tznms?key=1615f8d267c4a12a31445955bb6ff2fe

صلوٰة التسبیح کیا ہے- اور اسے کیسے پڑھا جاتا ہے؟

Infonaama > Islamic > صلوٰة التسبیح کیا ہے- اور اسے کیسے پڑھا جاتا ہے؟
صلوٰة التسبیح کیا ہے

صلوٰة التسبیح کیا ہے- اور اسے کیسے پڑھا جاتا ہے؟

صلوٰة التسبیح کیا ہے؟ آئیں آج جانتے ہیں

صلوٰة التسبیح کیا ہےاور اسے کیسے پڑھا جاتا ہے؟

حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے چچا حضرت عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو اس نماز یعنی صلوٰۃ التسبیح کی ترغیب فرمائی۔ اس نماز کے پڑھنے سے اللہ تعالیٰ پڑھنے والے کے اگلے پچھلے، نئے پرانے، غلطی سے یا جان بوجھ کرکئے ہوئے، چھوٹے بڑے، ظاہری اور مخفی، تمام گناہ بخش دیں گے۔ اور فرمایا کہ اگر ہو سکے تو روز ایک مرتبہ یہ نماز پڑھ لیا کریں۔ اگر اتنی سکت نہ ہو تو ہر جمعہ کے روز اس نماز کو پڑھ لیا کریں۔ اور اگر یہ بھی نہ کر سکیں تو مہینہ میں ایک بار پڑھ لیں۔ اگر اتنی بھی قدرت نہ رکھتے ہوں تو سال میں ایک بار اور اگر وہ بھی نہ کر سکیں تو کم از کم زندگی میں ایک بار اس نماز کو ضرور پڑھ لیں۔

(ابو دائود، ابن حبان، حاکم، ابن ماجہ۔ عن ابی رافعؓ و ابن عباسؓ)

صلواۃ التسبیح کا طریقہ

اس نماز کی تسبیح یہ ہے

سُبْحَانَ اللَّهِ وَالْحَمْدُ لِلَّهِ وَلاَ إِلَهَ إِلاَّ اللَّهُ وَاللَّهُ أَكْبَرُ

چار رکعت صلاۃ التسبیح کی نیت کرکے چار رکعت ایک سلام سے پڑھے۔

ثناء پڑھنے کے بعد اعوذباللہ سے پہلے 15 مرتبہ تسبیح پڑھے۔

اب آعوذ، بسم اللہ، سورۃ فاتحہ اور سورۃ کے بعد 10 مرتبہ یہی تسبیح پڑھے۔

اس کے بعد تکبیر کہتے ہوئے رکوع میں جائے اور رکوع کی تسبیح کے بعد 10 مرتبہ یہ تسبیح پڑھے۔

رکوع سے کھڑے ہو کر سمع اللہ لمن حمدہ، ربنا و لك الحمد کہہ لینے کے بعد 10 بار یہ تسبیح پڑھنی ہے۔

سجدہ میں سجدے کی تسبیح کہہ لینے کے بعد 10 مرتبہ یہ تسبیح کہے

سجدہ کے درمیان جلسہ میں 10 مرتبہ

اور پھر دوسرے سجدہ میں بھی 10 مرتبہ جیسے پہلے سجدہ میں پڑھی تھی اسی طرح پڑھے۔

یوں ایک رکعت میں اس تسبیح کی کل تعداد 75 ہو جائے گی۔ یعنی کل 4 رکعات میں تسبیح کی کل تعداد 300 ہو جائے گی۔ دوسری رکعت میں سورۃ فاتحہ سے پہلے تسبیح شروع کی جائے یعنی 15 بار اور باقی پوری رکعت ویسے ہی پڑھیں۔

بقیہ پوری نماز جیسے عام نماز ادا کی جاتی ہے ویسے ہی ادا ہو گی۔

صلواۃ التسبیح میں تسبیحات کی گنتی کیسے کی جائے؟

یہاں ایک سوال یہ کازمی دماغ میں آتا ہے کہ اتنی تسبیحات کی گنتی کا یاد رکھنا نماز کے دوران محال ہوجاتا ہے۔ تو اب اسکی گنتی کیسے کی جائے؟ تو علماء کرام نے اس کا ایک آسان طریقہ بتایا ہے جو آپ کی خدمت میں پیش ہے۔

نماز کے دوران آپ کی انگلیاں جس طرح بھی رکھی ہوں، انکو ویسے ہی رکھیں اور ہر تسبیح پر ایک ایک انگلی کو اسکی اپنی جگہ بس دباتے رہیں۔ مثال کے طور پر پہلی تسبیح کے بعد اپنے سیدھے ہاتھ کی انگلی کو نیت باندھے باندھے ہی ہلکا سا دبا لیں، اسی طرح دوسری باری پر دوسری انگلی اور چھ بار تسبیح ہوجانے پر دوسرے ہاتھ کی انگلیاں دباتے جائیں۔ ایسے ہی ہر بار کی تسبیح پر کریں۔

تسبیحات کا زبان سے گننا یا انگلی کی پوروں پر گننا مکروہ ہے لہذا نماز کے دوران پڑھی گئی تسبیحات انگلی کی پوروں پر یا زبان سے گننے سے اجتناب کریں۔

چونکہ صلاۃ التسبیح نفل نماز ہے لہذا اس میں تسبیح کے بھولنے سے سجدہ سہو لازم نہیں ہوگا۔ ہاں اگر نماز میں کوئی غلطی ہوگئی تو جیسے عام نوافل پڑھے جاتے ہیں، یہ بھی ایسے ہی پڑھی جائے گی۔ بس اس میں عام نوافل کے برعکس 300 زائد تسبیحات پڑھی جائیں گی۔ دوران نماز اگر تسبیح بھول جائے تو جب دوسری تسبیح پڑھنے کی جگہ ہو وہیں بھولی ہوئی تسبیح کو مکمل کر لے سوائے دو جگہ کے۔

رکوع کے بعد قیام میں۔

دو سجدوں کے درمیان جلسہ میں

اس بات کا خاص خیال رکھیں کہ صلواۃ التسبیح نفل نماز ہے اور نوافل انفرادی ادا کیئے جاتے ہیں۔ اللہ رب العزت کے دیئے اس عالیشان تحفے سے استفادہ حاصل کرنے کے لیئے آجکل رائج اجتماعات میں جانے سے اجتناب کریں اور اس عظیم الشان تحفے کو اپنی مغفرت کا ذریعہ بنایئں

اللہ پاک مجھے اور آپ کو ان پر عمل کرنے والوں میں سے بنائے۔ آمین

Leave a Reply

Cookie consent by Real Cookie Banner